6 صفر 1442 هـ   24 ستمبر 2020 عيسوى 10:18 am کربلا
موجودہ پروگرام
مین مینو

2020-08-19   40

قاہرہ۔۔ ہزار میناروں کا شہر

قاہرہ اپنی تاریخ کا ایک قدیم عرب اور اسلامی شہر ہے، جہاں ثقافتی، تہذیبی اور شہری تنوع اپنے بلند ترین مظہر میں دیکھا جاتا ہے ، اس میں ماضی اور حال کے درمیان ایک عجیب و غریب امتزاج  ہے، اور آج یہ سب سے بڑے عرب ملک یعنی عرب جمہوریہ مصر کا دارالحکومت ہے- اور اس کا سب سے بڑا اور اہم شہر ہے۔

قاہرہ دریائے نیل کے جزیروں کے کنارے، مصر کے جنوب میں واقع ایک مکمل شہرہے ، مطلب یہ کہ یہ دیہی اورصحرائی علاقوں سے پاک ہے ، کیونکہ یہ اپنے تمام علاقے پر پھیلا ہوا ہے۔ شہری عمارات اور رہائشی محلوں اور ان کی جسامت کی وجہ سے انہیں گریٹر قاہرہ کہا جاتا ہے ، کیونکہ اس میں صوبہ قاہرہ اور صوبہ گیزہ نیز شبرا الخیمہ بھی شامل ہیں۔ اس کی اہمیت کا اندازہ اس سے لگایا جاسکتا ہے کہ یہ ڈیلٹا کے سرے میں اور دوسری  طرف مشرقی اور مغربی سطح مرتفع کے درمیان واقع  ہے۔

اس کی آبادی (9.5) ملین ہے، جو آبادی کے لحاظ سے عرب دنیا کا  سب سے بڑا  شہر ہے ، کیونکہ یہ ) 37) بڑے   اضلاع میں منقسم  ہیں جو کہ مصر کی کل آبادی (10.6ملین) کی نمائندگی کرتا ہے۔

شہر کے قیام کی تاریخ فرعونی دور سے جا ملتی ہے، جب فرعونیوں نے فرعونیک شہر أون الفرعونية أو هليوبولس، " موجودہ "عین شمس "  جو کہ دنیا کے قدیم ترین دارالحکومتوں میں سے ایک ہے، قائم کیا تھا۔ اورجہاں تک  موجودہ شہر قاہرہ کی بات ہے، تو اس کی تعمیر عمرو ابن العاص کے ہاتھوں میں ہوا، جب عمر بن عاص کے زیر قیادت  مسلمانوں نے اس علاقے کو فتح کیا اور اسں شہر کو  فسطاط نام رکھا۔

پھر عباسیوں نے اس شہر پر قبضہ کیا اور اس کا نام عسکر رکھا پھر، اس کے بعد احمد ابن طالون "القطائع " نے فاطمی دور حکومت تک اس کی  تعمیر کی، فاطمی ریاست  جو کہ شیعہ، مذہب اسماعلی کے پیروکار اور اہل بیت علیھم السلام کے محبین میں سے تھے۔ معز الدین اللہ نے اپنی فوج کے سربراہ جوہر الصفلی کو فاطمی ریاست کے لئے ایک نئی دارلحکومت کے قیام کا حکم دیا۔ ، سن 969 ء میں فاطمی ریاست کا نیا دارالحکومت تعمیر کیا اور اس کو "قاہرہ" نام دیا گیا۔ ہر سال 6 جولائی وہ دن ہوتا ہے جس دن دارالحکومت اپنا یوم تاسیس مناتا ہے۔

فاطمی دور حکومت اسلامی دور حکومتوں میں  سب سے ممتاز رہا، شہر کے تمام گزرگاہوں، اور پرانے حلقوں میں فاطمی دور کے  فنون لطیفہ اور اس کے جمالیات کے تاثرات اب بھی نظر آتے ہیں  جو دیکھنے والوں کے لئے اس کی خوبصورتی  کو بیان کرتے ہیں کہ  جہاں بڑے بڑے  قلعے ، قلعے ، دیواریں ، اسکول اور مساجد تعمیر کیے گئے ہیں۔

قاہرہ ایک تاریخی شہر ہے۔ طول تاریخ میں اس کے لئے متعدد نام رکھے گئے جیساکہ  اسے ہزار میناروں  والا شہر ، مسر المحروسہ اور قاہرہ المزیز کے نام سے پکارا جاتا تھا ۔

قاہرہ ایک ناقابل فراموش تاریخی  شہر ہیں کیونکہ اس سرزمین پر مختلف تہذیبوں کے اثرات یہ ثابت کرتے ہیں کہ یہ شہر کئی تاریخی ادوار، جیسے فرعونی، یونانی ، رومن اور اسلامی ادوار سے گزر چکا ہے ، اس لئے یہ ایک سیاحتی مقام اور ایک تاریخی درستگاہ ہے جو زیادہ تر تہذیبوں کو اکٹھا کرتی ہے چاہے یہ تہذیب و ثقافت نئی ہو یا پرانی۔اور اس سرزمین پر نظر آنے والی یادگاریں اس کی گواہی دیتی ہیں، اور اس کی تاریخی  عظمت کی نشاندہی  کرتی ہیں ۔ جس میں گیزا کے علاقے میں موجوداہراموں اور اس  کے ساتھ  نیشنل میوزیم  میں موجود فرعونی یادگار، جس میں قیمتی سامان اور دیگر تاریخی اورثقافتی نشانات شامل ہیں  جو اس شہر کی تعریف اور شہرت میں اضافہ کرتےہیں ۔

قاہرہ میں  بڑی تعداد میں مساجد اور جامعات بھی موجود ہیں ، جس میں جامعہ الازہر، مسجد، احمد ابن طلون، مسجد ، عمرو ابن العاص، مسجدسلطان ، مسجدحسن ،مسجد محمد علی،  مسجد صلاح ال الییوبی کیسل ، الحکیم مسجد ، المنصور قالوان، مسجد ناصر محمد بن قالوان ، مسجد طاہربرقوق، مسجد شرف قنصوہ الغوری اور مسجد الرفاعی۔

قاہرہ میں  اہرام کے علاوہ  دیگر اہم تاریخی ، تہذیبی اور ثقافتی مناظر بھی شامل ہیں ، اس میں صلاح الدین کا قلعہ ، عابدین محل ، فرعونی گاؤں ، قاہرہ ٹاور، بیرن محل ، میوزیم آف اسلامک آرٹ ،جامعہ الازہر، گیزا زو اور میوزیم آف محمود ، محمدی محرم کے میوزیم ، شاہ زوجہ ، محمدی کے میوزیم ، محمودی کا میوزیم اور میوزیم آف اسلامک سیرامکس ، میوزیم آف موم ، ایل ساوی کلچر وہیل ، مصری اوپیرا ہاؤس ، محل آف آرٹس ، اور میوزیم آف جدید آرٹ بھی شامل ہیں۔

جغرافیائی محل وقوع اور اس کی ثقافتی ، سائنسی اور تاریخی حیثیت کی وجہ سے ، آج یہ بہت ساری علاقائی اور بین الاقوامی تنظیموں کا صدر دفتر ہے ، جیسے تحریر اسکوائر میں عرب ریاستوں کی تنظیم عرب لیگ کا صدر دفتر ، عالمی ادارہ صحت کے علاقائی  صدر دفتر ، اقوام متحدہ کا فوڈ اینڈ ایگریکلچرل آرگنائزیشن، نیز بین الاقوامی شہری ہوا بازی تنظیم اور بین الاقوامی ٹیلی مواصلات یونین ، اقوام متحدہ کی پاپولیشن فنڈ ، اقوام متحدہ کے خواتین ہیڈکوارٹر، اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام کا صدر دفاتر اور اقوام متحدہ کے دفتر برائے انسانی امور کی رابطہ کاری موجود ہیں ۔

قاہرہ کی  آب و ہوا گرمیوں میں درجہ حرارت (33-21) ڈگری سینٹی گریڈ  ، جبکہ سردیوں میں اس کی حدود (17-6) ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان ہوتی ہے۔

جملہ حقوق بحق ویب سائٹ ( اسلام ۔۔۔کیوں؟) محفوظ ہیں 2018