16 ربيع الثاني 1441 هـ   14 دسمبر 2019 عيسوى 3:56 pm کربلا
موجودہ پروگرام
مین مینو

 | اسلامک اثنولوجی (نسلیات) |  ایران کی مذہبی اور نسلی شناخت
2019-10-18   40

ایران کی مذہبی اور نسلی شناخت

ایران کی آبادی 80 ملین سے زیادہ افراد پر مشتمل  ہے، جس میں مختلف نسلوں، مذاہب اور زبانوں کے بولنے والے لوگ پرامن طور پر ہم آہنگی سے رہتے ہیں ۔ایران میں مذہبی، نسلی اور لسانی طور پر بہت سے متنوع گروہ موجود ہیں۔ فارسی نسل ایران کی آبادی کا نصف سے زیادہ ہے۔اور یہاں کی سرکاری اور غالب اکثریت کی زبان فارسی ہے۔

 نسلی تنوع:

ایران ایک کثیر النسل ملک ہے ۔ایرانی معاشرے میں فارسیوں، آذریوں، عربوں، کردوں، ترکمنوں، جیلاکوں اور دیگر کئی اقوام کے لوگ رہتے ہیں ۔ایرانی معاشرے میں ان کا تناسب درج ذیل ہے :

فارسی 51٪

کرد 24٪

موسیندرین اور گیبلز 8٪

آذری 7٪

لارڈز 7٪

جبکہ عرب ، بلوچی اور ترکمن باشندے مل کر 2٪ ،

دوسری اقوام 1٪

فارسی نسل آبادی کی اکثریت ملک کے وسط میں رہتی ہے، جبکہ دیگر نسلی اقلیتیں اطراف میں رہتی ہیں، جو ہمسایہ لوگوں سے جڑے ہوئے ہیں۔ ہر نسلی گروہ کی سرحد کے دوسری طرف اس کا پھیلاو ہوتا ہے ۔ کرد اپنی نسل کے بیٹوں سے عراق اور ترکی کے کردوں سے رابطہ کرتے ہیں۔ آذری آذربائیجان سے رابطہ کرتے، بلوچ افغانستان اور پاکستان  کے صوبہ بلوچستان سے رابطے میں ہیں ، اور عرب  عرب عراق میں عربوں سے بھی رابطے کر رہے ہیں۔ 

مذہبی تنوع:

مروجہ اسلامی مذہب کے علاوہ، یہاں متعدد مذاہب موجود ہیں ، جن میں سے کچھ کا زمانہ 3500 سال یا اس سے زیادہ قدیم ہیں۔ اسلام کے بعد ان مذاہب میں سب سے مشہور مذھب یہ ہیں زرتشت ، صبیان مانڈیان، مزدایک ، جیرسانا، یہودیت، یزیدیوں، مانیچیان اور کچھ دیگر مذاہب بھی موجود ہیں۔

مذہب اسلام ایرانیوں کی اکثریت کا مذہب ہے مسلمان ایرانی معاشرے کے 99٪ حصے تشکیل دیتے ہیں۔

زرتشت جسے مگوسیا کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، یہ ایک توحید پسند مذہب ہے جو سابقہ اقوام نے یہود، عیسائیت اور اسلام سے پہلے کا اپنایا تھا۔اس کا بانی زوروسٹر ہے، یہ فارس اور ایشیاء کے بڑے حصوں میں پھیل گیا تھا۔ قرون وسطی میں اچیمینیڈس، پارتھیان اور ساسانیوں نے اسے سرکاری مذہب بنایا۔یہ ایران اور ایشیاء کے کچھ علاقوں خصوصا ہندوستان میں پھیلے ہوئے ہیں اس وقت ان کی آبادی تقریبا 2،500،000 افراد پر مشتمل ہے اور ان کی کتاب ایوستاہے۔

منڈئین یا سبطین، ایک قدیم توحید پسند مذہب، آدم، یحیی ابن زکریا، انبیاء، جو عراق، فلسطین اور ایران میں ندیوں کے کنارے پھیلے ہوئے تھے ان کو مانتا ہے، ان کی کتاب عظیم کا خزانہ (کنزعٖظیم )کہلاتی ہے۔

یہودیت ایک آسمانی مذہب ہے جن کی کتاب تورات ہے یہ ولوگ حضرت موسیؑ کو نبی مانتے ہیں۔اسرائیل کے قیام سے پہلے ان کی بڑی تعداد ایران میں رہتی تھی پھر چھیانوے ہزار یہودی اسرائیل و امریکہ  چلے گئے ۔ان کی تعداد تیس ہزار رہ گئی ۱۹۸۰ میں پھر انہوں نے اسرائیل کی طرف جانا شروع کر دیا اور آج ایران میں دس ہزار کے قریب یہودی موجود ہیں۔اب یہ لوگ تہران،صفہان اور شیراز میں رہتے ہیں۔

زبانیں:

کسی بھی انسانی معاشرے میں کثیر لسانییت نسلی تنوع  کی طرف لوٹتی ہے۔ ہم پہلے ہی جان چکے ہیں کہ ایران میں مختلف ثقافتیں موجود  ہیں ، لہذا یہاں تقریبا  75 زبانیں بولی جاتی ہیں، لیکن بڑی اور زندہ زبانیں کم ہیںکیونکہ کچھ زبانوں کا دائرہ بہت کم ہے اگر ہم ایرانی کی اہم زبانوں کا احاطہ کرنا چاہیں تو ان زبانوں میں ہو سکتا ہے:

فارسی : ملک کی سرکاری زبان ہے فارسی نسل  اور دیگر نسلی نسلوں کی اکثریت یہ زبان  بولتی ہے۔

کردی :ایران کے شمال اور شمال مغرب میں کرد شہریوں کی زبان ہے۔

عربی: صوبہ اہواز کی زبان ہے، اہواز میں عربی النسل لوگوں کی اکثریت ہے اس لیے یہ ان کی زبان ہے۔

ترکمانی :ترکمان نسل لوگوں کی زبان ہے۔

بلوچی:سیستان بلوچستان میں آباد بلوچوں کی زبان ہے۔

جارجیا کی زبان: ایران میں درجنوں دیگر زبانیں بھی بولی جاتی ہیں جیسے پشتون، مانڈزم، فارسی اور دیگر زبانیں مگر یہ مقامی زبانیں ہیں اور بہت چھوٹے پیمانے پر بولی جاتی ہیں۔ 

پرامن بقائے باہمی:

ایران میں مذاہب، نسلوں اور زبانوں کی بڑی تعداد کے باوجود ، قدیم زمانے سے ایک مربوط اور پر امن معاشرہ  ہے ۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ سب ایک دوسرے کا احترام کرتے ہیں اقلیت اکثریت ایک دوسرے کو جگہ دیتی ہے ۔ جس میں مذہبی اور نسلی اقلیت اپنی فطری زندگی، رسم و رواج اور مذہبی رسوم کو آزادانہ طور پر اور کسی پریشانی کے بغیرانجام دے سکتے ہیں۔ ایران میں دوسرے مذاہب اور نسلی اقلیتوں کا وجود یہ  بتاتا ہے کہ انہیں وہاں پوری آزادی ہے اور وہ بغیر کسی پریشانی کے رہ رہے ہیں اگر انہیں مسائل ہوتے  تو وہ کب کے ایران چھوڑ چکے ہوتے۔

جملہ حقوق بحق ویب سائٹ ( اسلام ۔۔۔کیوں؟) محفوظ ہیں 2018